Dialogue

Vocabulary

Learn New Words FAST with this Lesson’s Vocab Review List

Get this lesson’s key vocab, their translations and pronunciations. Sign up for your Free Lifetime Account Now and get 7 Days of Premium Access including this feature.

Or sign up using Facebook
Already a Member?

Lesson Notes

Unlock In-Depth Explanations & Exclusive Takeaways with Printable Lesson Notes

Unlock Lesson Notes and Transcripts for every single lesson. Sign Up for a Free Lifetime Account and Get 7 Days of Premium Access.

Or sign up using Facebook
Already a Member?

Lesson Transcript

بادشاہی مسجد ایک تاریخی مسجد ہے جو سترہویں صدی میں تعمیر کی گئی۔
مغل بادشاہ اونگ زیب نے اس کی تعمیر کا حکم دیا، جو اس وقت دنیا کی سب سے بڑی مسجد تھی، اگرچہ آج یہ پاکستان کی دوسری سب سے بڑی اور دنیا کی پانچویں سب سے بڑی مسجد ہے۔
لاہور میں یہ مسجد کافی شہرت رکھتی ہے اور لاہور کے شناختی نشان کی حیثیت کی حامل ہے نیز ایک مقبول سیاحتی مقام ہے۔
بادشاہی مسجد بطور ایک مسجد اور مسلمانوں کے لئے عید گاہ دونوں کا کام کرتی ہے۔
اس میں داخلہ مسجد کے مشرقی جانب واقع ان سیڑھیوں پر چڑھ کر ہوتا ہے جو سرخ ریتلا پتھر سے بنے ایک محرابی دروازہ سے ہوکر گزرتی ہیں۔
مسجد کے سامنے کے حصہ میں کندہ کیا ہوا فریم ہے۔
ڈھانچہ کے چاروں کونوں میں سے ہر ایک میں تین منزلہ لال ریتلا پتھر کا مینار ہے جس میں ایک کھلا سائبان ہے جسے سنگ مر مر سے ڈهکا گیا ہے۔
مسجد کے اندر موجود بھورے پتھر والے سلیب کے چوکور صحن کے چاروں کونے پر چار چھوٹے برج ہیں۔
صحن میں ایسی محرابیں بھی ہیں جو دونوں جانب موجود ہیں۔
اصل عبادت گاہ میں سات حجرے ہیں جن کو کٹاؤ دار محراب سے علیحدہ کیا گيا ہے اور ایک مرکزی ہال ہے جس کے ہر ایک طرف پانچ محرابیں ہیں۔
اس میں ایک بڑا گنبد بھی ہے اور پھر اصل گنبد کے دونوں جانب بلب نما مزید دو گنبد ہیں۔
مرکزی عبادت گاہ دونوں طرف سے تین چھوٹے چیمبر سے گھری ہوئی ہے، جن کا استعمال تدریسی مقام کے طور پر کیا جاتا ہے۔
اندرونی حصہ کو کم قیمتی اور قیمتی پتھروں سے آراستہ کیا گیا ہے، جن کو پھولوں کی شکل میں سجایا گیا ہے۔
یونیسکو نے عارضی عالمی ثقافتی ورثہ سائٹس کی فہرست میں بادشاہی مسجد کو شامل کیا ہے۔
تنظیم نے مرکزی عبادت گاہ میں موجود زنیت کو "خوبصورتی کا ایک منفرد نمونہ اور مغل فن تعمیر کی کاریگری" سے تعبیر کیا ہے۔

1 Comment

Hide
Please to leave a comment.
😄 😞 😳 😁 😒 😎 😠 😆 😅 😜 😉 😭 😇 😴 😮 😈 ❤️️ 👍
Sorry, please keep your comment under 800 characters. Got a complicated question? Try asking your teacher using My Teacher Messenger.
Sorry, please keep your comment under 800 characters.

UrduPod101.com
Friday at 6:30 pm
Your comment is awaiting moderation.

بادشاہی مسجد ایک تاریخی مسجد ہے جو سترہویں صدی میں تعمیر کی گئی۔
مغل بادشاہ اونگ زیب نے اس کی تعمیر کا حکم دیا، جو اس وقت دنیا کی سب سے بڑی مسجد تھی، اگرچہ آج یہ پاکستان کی دوسری سب سے بڑی اور دنیا کی پانچویں سب سے بڑی مسجد ہے۔
لاہور میں یہ مسجد کافی شہرت رکھتی ہے اور لاہور کے شناختی نشان کی حیثیت کی حامل ہے نیز ایک مقبول سیاحتی مقام ہے۔
بادشاہی مسجد بطور ایک مسجد اور مسلمانوں کے لئے عید گاہ دونوں کا کام کرتی ہے۔
اس میں داخلہ مسجد کے مشرقی جانب واقع ان سیڑھیوں پر چڑھ کر ہوتا ہے جو سرخ ریتلا پتھر سے بنے ایک محرابی دروازہ سے ہوکر گزرتی ہیں۔
مسجد کے سامنے کے حصہ میں کندہ کیا ہوا فریم ہے۔
ڈھانچہ کے چاروں کونوں میں سے ہر ایک میں تین منزلہ لال ریتلا پتھر کا مینار ہے جس میں ایک کھلا سائبان ہے جسے سنگ مر مر سے ڈهکا گیا ہے۔
مسجد کے اندر موجود بھورے پتھر والے سلیب کے چوکور صحن کے چاروں کونے پر چار چھوٹے برج ہیں۔
صحن میں ایسی محرابیں بھی ہیں جو دونوں جانب موجود ہیں۔
اصل عبادت گاہ میں سات حجرے ہیں جن کو کٹاؤ دار محراب سے علیحدہ کیا گيا ہے اور ایک مرکزی ہال ہے جس کے ہر ایک طرف پانچ محرابیں ہیں۔
اس میں ایک بڑا گنبد بھی ہے اور پھر اصل گنبد کے دونوں جانب بلب نما مزید دو گنبد ہیں۔
مرکزی عبادت گاہ دونوں طرف سے تین چھوٹے چیمبر سے گھری ہوئی ہے، جن کا استعمال تدریسی مقام کے طور پر کیا جاتا ہے۔
اندرونی حصہ کو کم قیمتی اور قیمتی پتھروں سے آراستہ کیا گیا ہے، جن کو پھولوں کی شکل میں سجایا گیا ہے۔
یونیسکو نے عارضی عالمی ثقافتی ورثہ سائٹس کی فہرست میں بادشاہی مسجد کو شامل کیا ہے۔
تنظیم نے مرکزی عبادت گاہ میں موجود زنیت کو "خوبصورتی کا ایک منفرد نمونہ اور مغل فن تعمیر کی کاریگری" سے تعبیر کیا ہے۔